اگر کوئی تم سے پوچھے بتاؤ زندگی کیا ہے تو تم ہتھیلی پر ذرا سی خاک رکھنا اور اسے اڑا دینا………

اگر کوئی تم سے پوچھے بتاؤ زندگی کیا ہے تو تم ہتھیلی پر ذرا سی خاک رکھنا اور اسے اڑا دینا

اخلاق ایک دکان ہے اور زبان اسکا تالا ہے تالا کھلتا ہےتو معلوم ہوتا ہے کہ دکان سونے کی ہے یا کوئلے کی _ہتھیاروں سے جنگ تو جیتی جاسکتی ہے مگر دل نہیں کیونکہ دل صرف کردار کے ساتھ جیتے جا سکتے ہے -صورت اور سیرت میں سب سے بڑا فرق یہ ہے کہ صورت  دھوکا دیتی ہے جبکے  سیرت پہچان کرواتی  ہے -دنیا میں ہزاروں رشتے بناؤ لکین ایک رشتہ ایسا  ضرور  بناؤ کہ جب ہزاروں آپکے خلاف  ہوں تو وہ ایک آپکے ساتھ ہو- مجھے اُس شخص پر تعجب ہوتا ہے جو روز دکھتا ہے کہ اِس کی سانسیں اور  عمر کم ہو رہی ہے_
لکین  وہ موت کے لئے تیاری نہیں کرتا – حضرت علی سے پوچھا گیا کہ انسان کب برا بنتا ہے تو آپ نے فرمایا.جب وہ اپنے آپ کو دوسروں سی اعلی سمجنے لگتا ہے – جب کوئی دوست تمہیں اپنا راز بتائےتو یہ سمجھ لینا کے وہ اپنی عزت تمہیں امانت دے رہا ہے اس میں کبھی بھی خیانت مت کرنا_
کسی کا عیب تلاش کرنے والے کی مثال اس مکھی جیسی ہے جو سارا خوبصورت جسم چھوڑ کر صرف زخم پر بیٹھی ہے- جو اپنی ضرورتیں بڑھا لیتا ہے اسے اکثر محرومی کا  غم رہتا ہے- نفس کو کسی اچھے کاموں میں مشغول رکھو ورنہ نفس تمہیں ایسے کاموں میں لگا دےگا جو نہ کرنے کے قابل ہونگے_
کامیابی حوصلوں  سے ملتی ہے حوصلے دوستوں سے ملتے ہے دوست مقدروں سے ملتے ہے اور مقدر انسان خود بناتا ہے – جب عقل بڑھتی ہے تو باتیں کم ہوجاتی ہیں- زبان ایک ایسا درندہ ہے کہ اگر اسے کھولا چھوڑ دیا جائے  تو پھاڑ کھائے- جو شخص سجدوں میں روتا ہے اسے تقدیر پر رونا نہیں پڑتا _

تین چیزیں ایمان کو تباہ کر دیتی ہے
1. امیروں کی محفل-
2. عورتوں کی محبت-
3. جاھلوں سے بحث-

رشتوں کی خوبصورتی ایک دوسرے کی بات کو برداشت کرنے میں ہیں- بے عیب انسان تلاش کرو گے تو اکیلےرہ جا ؤ  گے -ایسی غربت پرصبر کرنا جس میں غربت محفوظ ہو اس امیری سے بہتر ہے جس میں زلت و رسوائی ہو_دوست کو دولت کی نگاہ سے مت دیکھو وفا کرنے والے دوست اکثر غریب ہوتے ہیں – انسان کے کردار کی دو منزلیں ہیں دل میں اتر جانا یا دل سے اتر جانا – جو شخص تمہارا غصہ برداشت کرلے اور ثابت قدم رہے تو وہ تمہارا سچا دوست ہے -جو شخص موت کو یاد رکھتا ہے وہ تھوڑی  سی دنیا پر بھی خوش ہوجاتا ہے_

حضرت علی نے فرمایا:
 نا مکمل علم فساد پیدا کرتا ہے_
ہمیشہ سچ بولو تاکہ تمہیں قسم کھانے کی ضرورت نہ پڑے_
دنیا میں بہترین انسان وہ ہے جس کے لئے کوئی روئے_
اور بدترین انسان وہ ہے جس کی وجہ سے کوئی روئے_

 

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here