کیا تماشا ہو۔۔۔۔( حفظہ اشتیاق فلکؔ)

hifza malik

میں لب کھولوں اور سب کہدوں ،تو دیکھو کیا تماشا ہو، 
میں اڑنے کو جو پر تولوں ، تودیکھو کیا تماشا ہو۔۔۔ 

اپنے عہد و پیماں کو، رفاقت اور شرافت کو،
بدل دوں گر عداوت سے، تو جانے کیا تماشا ہو۔۔۔

میں اس کی تشنگی حتیٰ کہ ہر اِک اِک سزا پر بھی،
 بنوں خاموش تماشائی ، تو اعلیٰ کیا تماشا ہو۔۔۔

بکھرے آشیاں کے ہر ، تری واپس رسائی تک،
نشاں سارے مٹادوں تو ،عجب پھر کیا تماشا ہو ۔۔۔

فلکؔ تم وفائوں کی نزاکت نہ سمجھنے کی،
  گر جو شرط منوالو، تو سوچو کیا تماشا ہو۔۔۔۔
 حفظہ اشتیاق فلکؔ


2 COMMENTS

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here